بھارتی اڑیسہ اور بنگال میں شدید سمندری طوفان کا خطرہ

بھارت کی دو ریاستوں اڑیسہ اور بنگال کو آنے والے دنوں میں ایک شدید سائیکلون یعنی سمندی طوفان کا خطرہ لاحق ہے

جہاں پاکستان کی طرح بھارت میں کورونا وائرس تیزی سے پھیلنا شروع ہوا ہے ، اور اس سے متاثرہ افراد کی تعداد ایک لاکھ سے تجاوز کر چکی ہے۔ وہ دنیا میں سب سے زیادہ کورونا متاثرین کی لسٹ میں گیارویں نمبر پر پے۔ وہاں اس بحرانی صورت حال میں بھارت کی دو ریاستوں اڑیسہ اور بنگال کو آنے والے دنوں میں ایک شدید سائیکلون یعنی سمندی طوفان کا خطرہ لاحق ہے۔ سے نپٹنے کی تیاری کر رہا جس کے بارے میں خدشہ ہے کہ وہ پچھلی کئی دہائیوں میں سب سے زیادہ شدت رکھنے والا سمندری طوفان ہو سکتا ہے۔

 سائینس دانوں کی طرف سے امپفان کے نام سے منسوب کیا جانے والے اس سمندی طوفان کے بارے میں ماہرین موسمیات کا کہنا ہے کہ یہ طوفان اپنے ساتھ بڑے پیمانے پر تیز بارش لائے گا، جبکہ اس کے ساتھ ساتھ 185 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے چلنے والی ہواؤں کے شدید جھکڑ بھی چلنے کے امکانات ہیں۔

اس حوالے سے اڑیسہ اور مغربی بنگال کی ریاستوں میں سمندری ساحل کے قریب واقع ان تمام دیہاتوں اور قصبوں کو خالی کرایا جا رہا ہے جن کے بارے میں بھارتی سائنس دانوں کا دعوی ہے کہ وہ اس طوفان کی شدید لپیٹ میں آ سکتے ہیں۔ احتیاطی تدابیر کے طور پران دونوں ریاستوں کی حکومتی انتظامیہ نے وہاں سرکاری سکولوں، بڑی عمارتوں اور دیگر عمارتوں کو طوفان کی صورت میں استعمال کرنے کیلئے ضروری سامان سے بھر کر ، افرادی پناہ گاہوں میں تبدیل کر دیا ہے۔

حکومتی ترجمان اور بھارتی پریس  کے مطابق  کورونا کے پھیلاؤ کی اس حساس صورت حال میں سماجی رابطوں میں ضروری فاصلے برقرار رکھنے کی غرض سے ریاستی انتظامیہ کو ابھی بھی مذید جگہ درکار ہے۔ ان دونوں ریاستوں کی مقامی حکومتوں نے بھارت کی مرکزی حکومت سے امداد طلب کر لی ہے

فاروق رشید بٹ
عالمی امن اور اتحاد اسلامی کا پیام بر ، نام فاروق رشید بٹ اور تخلص درویش ہے، سابقہ بینکر ، کالم نویس ، شاعر اور ورڈپریس ویب ماسٹر ہوں ۔ آج کل ہوٹل مینجمنٹ کے پیشہ سے منسلک ہوں ۔۔۔۔۔

تازہ ترین خبریں

کورونا بحران کے باعث ٹی 20 ورلڈ کپ ملتوی کر دیا گیا

انرنیشنل کرکٹ کونسل کی طرف سے یہ حتمی بیان سامنے آ...

ایران میں حکومت کے مخالف صحافیوں کو سخت سزاؤں کا سلسلہ جاری ہے

مغربی اور امریکی میڈیا کے مطابق ایرانی سرکاری عدالت نے وائس...

Comments

Leave a Reply

تازہ ترین خبریں