چینی دستے لداخ سیکٹر میں بھارتی علاقے میں داخل ہو گئے

بڑھتی ہوئی کشیدگی کے دوران بھارتی آرمی چیف جنرل ایم ایم ناراوا نے 22 مئی کو 14آرمی کی ویں کور کے ہیڈ کوارٹر کا دورہ کیا

عالمی پریس اور  ڈیفنس نیوز ذرائع کے مطابق   چینی فوجی دستے  گیلان وادی میں لداخ اور سکم  کے   متنازعہ علاقے چینی کلیم لائن (سی سی ایل) میں داخل ہو گئے ہیں ۔ اس رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ ہندوستان نے چینی افواج کے جارحانہ اقدامات کے پیش نظر   مذید فوجی نفری تعینات  کر دی ہے۔
اس سے قبل ملنے والی اطلاعات میں بتایا گیا تھا کہ چینی فوج لداخ میں ایل اے سی کے ساتھ پینگونگ تس اور وادی گلیان کے آس پاس کے علاقوں میں اپنی فوج میں تیزی سے اضافہ کر رہی ہے۔ جو اس امر کا  اشارہ  ہے  ہندوستانی فوج کیخلاف اپنا جارحانہ رویہ ختم  کرنے کیلئے تیار نہیں ہے۔
 
نیوز ایجنسی پی ٹی آئی کی ایک رپورٹ میں بتایا گیا ہے  کہ چینیوں نے بھاری فوج کے احتجاج کے باوجود گذشتہ دو ہفتوں میں سو سے زیادہ  خیمے اور بینکروں کی تعمیر سے   وادی گالان میں اپنی فوجی موجودگی کو مظبوط کیا ہے۔
 
بڑھتی ہوئی کشیدگی کے دوران ، بھارتی آرمی چیف جنرل ایم ایم ناراوا نے نے 22 مئی کو لیہ میں 14 ویں کور کے ہیڈ کوارٹر دورہ کیا اور اعلی کمانڈروں کے ساتھ ایل اے سی کے ساتھ متنازعہ علاقوں سمیت خطے میں مجموعی طور پر سکیورٹی منظرنامے کا جائزہ لیا۔ 
مشرقی لداخ میں صورت حال اس وقت مزید خراب ہوگئی جب تقریبا سو کے قریب  سو کے قریب چینی اور ہندوستانی فوجی 5 مئی  کو  پرتشدد دستی لڑائی میں آمنے سامنے تھے۔ لیکن بعد میں  دونوں فریقوں کی اعلی سطح پر ہونے والی ملاقات کے بعد  دونوں چرف کے جنگی دستے صلح  پر راضی ہوگئے۔ مقامی کمانڈرز کے مطابق  اس تشدد میں سو سے زیادہ ہندوستانی اور چینی فوجی زخمی ہوئے تھے۔
 
پینانگ ٹسو میں پیش آنے والے واقعے کے بعد 9 مئی کو شمالی سکم میں بھی اسی طرح کا واقعہ پیش آیا تھا۔گذشتہ ہفتے میں دونوں اطراف کے مقامی کمانڈروں نے کم از کم پانچ ملاقاتیں کیں جس کے دوران ہندوستان کی طرف سے چین عوامی لبریشن آرمی (پی ایل اے) کی طرف سے وادی گیلوان کے علاقوں میں بڑی تعداد میں خیموں اور بنکرز بنانے  پر سخت احتجاج کیا۔ اس علاقے کے بارے  بھارت کا دعویٰ  ہے کہ یہ اس کا علاقہ ہے۔
اطلاعات میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ چینی فوج نے ہندوستانی فوج اور بھارت کی تبتی بارڈر پولیس (آئی ٹی بی پی) کے ایک سرحدی گشتی  دستے کو حراست میں لیا گیا تھا۔ لیکن چینی فوج نے  گذشتہ ہفتے کے شروع میں ان کو رہا کر دیا تھا۔ صورتحال دونوں اطراف کے کمانڈروں کی سرحدی میٹنگ کے بعد پر سکون ہو گئی تھی ۔
فاروق رشید بٹ
عالمی امن اور اتحاد اسلامی کا پیام بر ، نام فاروق رشید بٹ اور تخلص درویش ہے، سابقہ بینکر ، کالم نویس ، شاعر اور ورڈپریس ویب ماسٹر ہوں ۔ آج کل ہوٹل مینجمنٹ کے پیشہ سے منسلک ہوں ۔۔۔۔۔

تازہ ترین خبریں

کورونا بحران کے باعث ٹی 20 ورلڈ کپ ملتوی کر دیا گیا

انرنیشنل کرکٹ کونسل کی طرف سے یہ حتمی بیان سامنے آ...

ایران میں حکومت کے مخالف صحافیوں کو سخت سزاؤں کا سلسلہ جاری ہے

مغربی اور امریکی میڈیا کے مطابق ایرانی سرکاری عدالت نے وائس...

Comments

Leave a Reply

تازہ ترین خبریں